شہرِ محبت ، ہجر کا موسم ، عہدِ وفا اور میں

شہرِ محبت ، ہجر کا موسم ، عہدِ وفا اور میں
تو تو اس بستی سے خوش خوش چلا گیا، اور میں

تو جو نہ ہو تو جیسے سب کو چپ لگ جاتی ہے
آپس میں کیا باتیں کرتے رات ، دیا اور میں
...
سیرِ چمن عادت تھی پہلے اب مجبوری ہے
تیری تلاش میں چل پڑتے ہیں باد صبا اورمیں

جس کو دیکھو تیری ہو میں پاگل پھرتا ہے
ورنہ ہم مشرب تو نہیں تھے خلقِ خدا اور میں

ایک زمانے بعد فراز یہ شعر کہے میں نے
اک مدت سے ملے نہیں ہیں یار مرا اور میں

Search This Blog